شمیم عارف


 شمیم عارف

آؤ ابھی یہ سلسلہ کشمیر کا ھے۔۔
دیر تک ۔۔۔چلے ۔۔۔گا
دیکھو۔۔چراغ ۔بجھنے نہ دینا۔۔۔۔
یہ سلسلہ  سحر تک۔۔چلے ۔۔گا۔
ھو گی  طلوع پھر اک نئ صبح ۔
چلے چلو ساتھیو یہ ۔۔۔۔۔رستہ کشمیر تک
چلے گا۔۔
راہ میں بیٹھ نہ  جانا   تھک کر   ہار کر  مایوسی ھو کر
کانٹوں کی طرح بکھرے ہوئے ہیں ۔
یہ کانٹے نہیں ھیں ۔۔۔
یہ۔۔لاشے۔۔۔ھیں ۔۔۔۔۔
میرے۔۔۔پیاروں کے
حیا داروں۔۔۔۔۔کے۔
میرے بھائیوں ۔۔کے
میرے۔جواں سال بیٹوں کے ۔۔اور پیارے شریک حیات کے ۔۔۔
انھوں نے دی ھیں ۔۔۔۔
قربانیاں اپنے جسم و جاں کی۔۔۔اپنےگھر بار کی۔۔اپنے اہل و عیال کی۔۔۔
ٹھرنا نہیں ھے تھک کر
ڈل جھیل تک جائے گا
غازی یاشہید میں نام
اپنا کرائے گا۔
بڑھے چلو ۔۔چلے چلو۔۔
منزل مقصود تک ۔۔
منزل دور نہیں ۔سمجھوتہ منظور نہیں ۔کہتے چلو
اللہ اکبر  اللہ اکبر

Leave your comment !