مظہر اقبال مظہر

لمحہ ء حاصل ہے تِری دید کا لمحہ
 یا نزع کا عالم ہے تِری دید کا لمحہ

ٹپکے تو بنے آنسورک جائے تو فریاد
ہر سانس کا محور ہے تِری دید کا لمحہ

آ مل میری روح کو معطر کردے
وجہء تخلیق ہے تِری دید کا لمحہ

 یوں معلق نہ رکھ مجھے محوِ تلاش کر
خلعت جستجوہے تِری دید کا لمحہ

سکوت ِ انفاس  سے پذیرائی بخش
مظہر ِ کریمی ہے تِری دید کا لمحہ

لب کشائی وہ بھی تِری محفل میں
کشفِ غنیت ہے تِری دید کا لمحہ