غزل 

ڈاکٹر محبوب احمد کاشمیری 

ہر ایک  شخص   ڈرایا  ہُوا  ہے  بستی  میں

وبا  نے   قہر   مچایا   ہُوا   ہے  بستی  میں

دعائیں دیتا ہے سب کا بھلا ہو سب کی خیر

وہ  اک بزرگ  جو آیا  ہوا ہے  بستی  میں

ہمارے  قصے   سنایا   کرے   گا  بچوں  کو

جو  ہم نے  پیڑ  لگایا  ہوا  ہے  بستی  میں

ہمیں جو  پاؤں کی  جوتی سمجھنے  لگ گیا ہے

ہمیں  نے سر  پہ بٹھایا  ہوا  ہے بستی  میں

میں سو مریضوں میں  جیسے  انار کی صورت

جو سب کے ہاتھ میں آیا ہوا ہے بستی میں