غزل 

ڈاکٹر محبوب احمد کاشمیری 

فن پارہ : گیوری لو ملر

دل  میں جس درد کی جگہ ہی نہیں 

اس کے بارے میں سوچتا ہی نہیں 

خواہش لمس  کوئی  عیب  ہے  کیا 

باخدا   یہ   کوئی    گنہ  ہی   نہیں 

سامنے  سے  اسے   پکاروں  کیا ؟ 

وہ  پلٹ کر  تو  دیکھتا   ہی  نہیں 

دل  نے  رفتار کیوں  پکڑ لی  ہے 

فیصلہ  تو   ابھی    کیا   ہی   نہیں 

جانتا  ہوں کہ وہم  ہے مرا عشق 

یہ  مری   جان  چھوڑتا  ہی  نہیں 

ڈھونڈتا  پھر رہا  ہوں  میں  اس کو 

جس  کا  کوئی   اتہ پتہ   ہی   نہیں

 تو  مرا   پہلا  پیار   ہے  ،  محبوب

دوسرا   تو   ابھی   ہوا   ہی   نہیں