کواڑیا نا پھَٹ

مظہر اقبال (یہ افسانہ راولاکوٹ میں بولی جانے والی پہاڑی زبان میں لکھا گیا ہے۔ افسانہ نگار کی آوازمیں '' کواڑیا نا پھَٹ'' سننے کے لیے: یہاں کلِک کیجیئے)

اس نا اصلی ناں تہح کشمیرہ سا مگر گرائیں نے سارے لوک اس کی نوری آخنے سے۔ سْتی نی ایں سْتی نی ایں اکھّیں، تہح نِکّے جیہے قدّح نی نوری جدوں چِٹّی شمیت چادر تہر یح رستے اْپرا لنگنی ہونی سی تہح اینیاں لغنا ہونا سا کیہ گانویا نا لوڑہح لغی نیں ۔ زِمیاں اْپرا اْس نی اَکھ اودھوں اٹھنی ہونی سی جدوں کوئ اْس نا ناں ہینّی تہح بولانا ہونا سا۔ نظر تہح اْس نی زِمیاں اْپر مگر کن گیں رائیں نی ایں آوازیں اْپر ہونے سے۔ جہیڑا کی وی اوہ بجھنی ہونی سی اس اوپر کہر آنی گل ضرور کرنی ہونی سی۔ ما ٫ بوں سمجھانی ہونی سیِوْس کہ کْڑیے لوکیں نی ایں گلّیں اْپر کن نا تہرنیں کر ۔ فیر وی اوہ کینا کیہ بْجھی اینی سی اْٹھی۔

اج اپنے بہیڑے وِچ پیَر رکھْن سا د بولی، " ماٹی یو کہح گل ہوئ کہ جس نی گڈی چوری وح ، پْلس چا٫ پانی وی اسح نے کرہہحا آنی کرہح " ماوو کھوری ایں نظریں کنّے اْس لح دیکھّی تح جواب دیتا۔ " سو واری میں تْو آخیا اپنے کمیں کنے کم رکھنی کر۔ تو کح لغح اینھیں گلیں کنیں ۔ نا تواڑی گڈی گیئی تہح نا پْلس تواڑے بیہڑ یچ آئی ۔ اْٹھ میں کیا چای نا کہوٹ بنائ دہح"۔ چا٫ بنانیاں نوری سوچنی" ' مہاڑیا ماؤ یو گل چھواۓ ناں کہح فیدا ؟ شامی توڑیں گل سارے گرائیں وچ پھیلی نی ہو سی ۔ ہور ایہہ وی پتہ لغا نا ہوسی کے نمبردار صاو نیں گڈی کْن کھولی ہینی گیا اٹھی۔ اللہ جانے گڈی چوری ہوئ نی وی دی کہ کیہ ہور یہح رولا دا۔ تیاڑھے دو لنگتھے ، گڈیا نی گل اتھین یہہ رئ تہح لوکیں کھْس پھْس کرنا شروع کری شوڑی۔ نوریا نے کنیں وچ وی یو گل چڑہی ہے گئ کہ رمضانیں چاچے نا نِکاّ گدرا نمبر دار صاو نے بیہڑے وچ بٹّے مارنا وا تہح اوہنیں نے نوکرھح اتنا ماریا کہ اس نی اکھ پھٹیئ گئ۔

نوری اج کہر آئ تہح ڈھلکے نے اتھرو روکی تہح بولی " اماں ، نمبردار صاو نے گدرے نی اکھ پھٹی نی وح تہح اج گرائیں نے سارے لوک اوہنیں نے بیہڑے وچ بیٹھے نے وین وا۔ میں رمضانیں چاچے نے بنے اپرا لنگینا ابے ہوریں اوہنیں نے بہیڑے وچ دیکھیا تہح میں وی چاچیا کولا خیر سْخ کیتیا اوہنیں نے کہر لنگی گئ سیوس ۔ اوتھیں کلہی چاچی نکے گدرے نا سر گودا وچ رکھی تہح بیٹھی نی سی۔ تھوڑیا دیریا بعد اوہنیں نا بڑا پتر جس فوجی آخنے اوہ کہر آیا تہح بوں غصے نا پیریا نا سا۔ آخے نمبردارح اس گلا نا سہاو دینا ہے پیسی ۔

رات پئ تہح باہر لوکیں نی آں اچیاں اچیاں اوازاں اینا شروع ہوئ گئیاں ۔ نوریا نا ابا جوتی ہاتھح وچ ہینی پیریں ہیٹھ باہنے لغا سا کہ نوریا نی اماں بولی " مہاڑییں بْڈھییں ہڈییں وچ ہن ایتنی جان نیں کہ تسیں پچھیں کوٹ کچیریاں لوڑنیں واں۔ ایتھیں چپ کری بیجا ، پھدری پتہ لغی ایسی یو رولا کس گلا نا دا۔ ابا دروازے کولا مڑی آنیں کرسیا اپر بیجیّ آ۔ اٹاٹرییں نظریں کنے دروازے لے دیکھنا تہح کن اس نے پرگی آ اوپر لغی اینیں۔

راتی نا کوئ ترییہا پہر وا ہوسی جدوں بندوقیں نے فیریں نی آں اوازاں اینا شروع ہوئ گئیاں۔ نوری آ نے کہرہح نے سارے لوک اکھیں ملنے اٹھی اے۔ نوریا نے نکے دو پرا ٫ ڈری تہح ماؤ کنے چموٹی اے ۔ اماں بولی " اللہ خیر کرح ، یو گولے اج کیہڑیا ماوو نے کلیجے اپر پھٹنے، اہیہ ہن پھدری ہے پتہ لغسی۔"

نکی لو ہالے پھٹنی سی کہ رمضانیں نا بڑا پتر جس اپنا نا آپی ہے فوجی رکھا نا بہیڑے وچ آنی کھلتا ۔ " اوہ کہر آلی او ، راتی تڑکینیار بجھے سیا ؟" ایہ گل بجھی تہح نوریا نا ابا اپنی بنین گلے وچ بائ تہح باہر دوڑیا ، دروازے چا نکلنییاں بولیا

جی جی فیریں نی اواز تہح بجھی سی، خیر تح دی نا؟"

فوجی بولیا " اپنی تہح خیر مہر دی، نمبردارھح نی خیر نییں۔ راتی اْس نا نوکر پھڑکائ سَٹیا ۔ چاچا تْو اپنیاں کْڑیا ہینی تہح آٹھ بجہے تھانیچ پہوچ ، تسیں تھانیدارح کول بیان لیخانا۔ "

نوریا نا ابا منڈی ہلائ تح بولیا " جی جی ، بیان کہح دینا ؟"

"تسیں بیان ایہ دینا کہ نمبردارح نا نوکر تواڑیا کڑیا تنگ کرنا سا " ۔

نوریا نے ابَے اہیاں لغا ، کْسہح اْس نے دلہح اْپر کواڑیا نا پھٹ ماری شوڑیا " ۔ فٹ بولیا '' مہاڑی کڑی تہح کل کہرا ہے نی نِختی ؟ "

فوجی کڑکی تح جواب دینا " چاچا تْو یو گل ایہ بانی ناں؟ کہح فرق پئ گئ سی ؟"

تھانے چا جدوں نوری آپنے ابے کنے باہر آئ تہح نمبردار صاو ، چاچا رمضان گرائیں نے ہور بوں ساریاں لوکیں کنے بیٹھے نے چائ نے ہوٹلہر بیٹھےنے گلاں کرہح لغے نے سے۔ بوں زیادہ تہح نیں مگر ہیک گل نوریا نے کنے وچ پئی اہ گئی " کیہ دئی دلائ تح گل مکنی چاہینیں "۔

نوری کہر پہوچی ، چٹی چادر لوائی کلیا کنے لڑکائی ، کالا دواٹا گلہچ بائی تہح ماوو کول گاچھی بیٹھی۔ " اماں، ہیک گل دسا؟ نمبردار صاوو تہح رمضانیں چاچے تصفیہ کرنا سا تہح آسیں کولا چہوٹھا بیان دیوایا دینیں، جِنہیں نا پتر مارنویا ، اوہنییں نا مونھ کوئیاں بند ہوسیں؟"

"کڑیے تواڑیا کھوپڑیا وچ یو گلاں کْن بانا؟ گاچھی اپنے پیو کولا پْچھ جہیڑا تہاڑی رات رمضانیں نیاں بکھیا کنے لغا نا ہونا ۔ نوکریح نے پچھلیاں وی کیہ دئی دلائی جان چھوڑائی ہو سیں نیں۔ تہح تواڑے پیو کہح لبا ؟ کھہیھ تہح کہٹا؟ اْلٹا اپنیاں عزتیں نا جنازہ کڈائی شوڑیون "۔

نوریا نے اتھرو ڈھلکی تہح زِمیاں اٌپر ٹہٹھے توں پہلے ہے ماوو اس اپنے کلاوے وچ بائی شوڑیا "۔ ما٫ اپنے اتھرو نوریا کولا چھوانیں چاہنیں سی یا نوریا نے اتھرو دیکھنے نیسی چاہنی۔ بوہت دیریا تک ما٫ تہیح ہیک دووے نے گلےلغینی آں رہیاں۔

راتیں نی روٹی پئی نی ٹھڈی ہوئی گئی ، ما٫ آخنیں میں پہوکھ یہ ہ نیں تہح نوری وی سِرھح نے دردہح نا پہانا کری لیٹی گئی۔

لیٹی تہح بولی " اماں ہیک گل تسیں نا پتہ ہوسی۔ اج تھانے چا باہر نکلنیاں ابے ترہیہ لغی نی سی تہح میں چائی نے ہوٹلہح اپرا اوہنیں پانییں نا گلاس پیوایا۔ اتھیں دو کوئیے آپے چی گلاں کرنے سے تہح میں اوہنیں نیاں گلاں بجنی سیوؤس۔

اوہ آخین کے رمضانیں پچھلیا سالا تھانے وچ درخاس دیتی سی کے نمبردارہح نے آخے اپر لوچے گدریاں اس نے بوٹے پہانیں شوڑے سے۔ جس نا اس کی معاوضہ لبنا چاہینا۔ تہح اوہ ایہ وی گل باہنے سے کے نمبردار ھح اس گلا نا ساڑا سا تاں اوہنیں اپنے بہڑے وچ بٹیاں نا پہانہ کری تہح اپنے نوکرہح کولا رمضانیں نا نِکا گدرا کُٹّایا سا۔"

ما، یو گلاں بُجہی تہح اپنے دویں کنّے اُپر ہتھ لائی تہح بولی " کُڑیے تُو کنّیں مہاڑی پوری نئیں پینیں۔ تْو اِس اگیاڑہح پہاگیاڑہح نا کہح لبسی ؟ جدوکنی تواڑے دادے نی زمیں نمبردارہح ہیٹھ بائی نیں، رمضان تہیاڑیا رات یا راتی تہیاڑی آخے تواڑا پیو وی اوییہح گل باسی –"

مہینہ ہیک ہور لنگتھا تہح ، ستیں گرائیں وچ یو گل پھیلی نی سی کہ نمبردار صاو نا جہیڑا نوکر مارنویا سا اس نوریا کنے کیہ تہح بدتمیزی کیتی ہوسی جہیڑے پیو تہح تہیح دووے بیان دیتیا تھانے وچ پہوچے سے۔ ہْن نوریا وی چپ لغی نیں، ما٫ تہیاڑی رات اتھرو سٹنیں ، تہح پیو کہرا ہے نئیں نکلنا ۔