July 6, 2022

ایک بڑے افسانہ نویس سے گفتگوکا شرف / ابن آس محمد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابن آس محمد

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک بڑے افسانہ نویس کا فون آیا ۔( نام رہنے دیں ۔۔۔ وہ اتنے بڑے بھی نہیں )
کہنے لگے :
 ابن آس ،کیسے ہیں آپ ۔۔۔؟
آس : اللہ کا کرم ہے ۔۔۔ آپ کون ۔۔۔؟؟
وہ : میں فلاں ۔۔
آس : اوہ ۔۔۔۔ اچھا اچھا ۔۔ کیسے مزاج ہیں ۔۔آپ تو ماشاٗ اللہ بڑے افسانہ نویس ہیں ۔
وہ : جی بس ۔۔۔۔ کرم نوازی ہے ہے آپ کی ۔۔
آس : جی نہیں ۔۔۔ آپ کو اللہ نے عزت دی ہے ۔۔۔
وہ : آپ کو ایک مزے کی بات بتاؤں ۔۔۔۔؟
آس : جی ۔۔۔ کہیئے ۔۔
وہ : میں بچپن سے آپ کو پڑھ رہا ہوں ۔۔۔۔ بہت چھوٹا تھا تب سے آپ کی کہانیاں پڑھ رہا ہوں ۔۔۔۔ اور اب بھی آپ بچوں کے لیے لکھتے ہیں ۔ حیرت ہے ۔۔۔
بچوں نے بتایا کہ ابن آسس کے ناول لینے ہیں تو میں چونکا آپ کا نام سن کر ۔۔۔۔۔ کسی سے نمبر لے کر فون کر رہاہوں ۔۔
آس : جی ہاں ۔۔۔۔۔۔ اب تو عادت سی ہوگئی ہے بچوں کے لیے لکھنے کی ۔
وہ : میں نے آپ کو ایک خاص مقصد کے تحت فون کیا ہے ۔۔۔
آس : جی ۔۔۔ فرمائیے ۔۔۔
وہ : میں آپ کو ایک مشورہ دینا چاہتا ہوں ۔۔۔ اگر برا نہ لگے تو ۔۔
آس : جی جی ۔۔۔ کہیئے ۔۔۔
وہ : آپ نے پوری زندگی لگادی لکھنے میں ۔۔۔۔ اتنالکھا کہ ہم صرف سو چ ہی سکتے ہیں ۔۔۔۔ میں آپ کی انرجی دیکھ کر حیران ہوتا ہوں ۔۔۔۔ کیا ہی اچھا ہوتا کہ آپ لٹریچر کی طرف توجہ دیتے ۔۔
آس : اچھا ۔۔۔۔ یہ جو میں بچپن سے لکھ رہا ہوں ۔۔۔ یہ لٹریچر نہیں ہے ۔۔؟؟؟
وہ : ( ہنسی) ۔۔ بھئی ۔۔۔ یہ تو بچوں کی تحریریں ہیں نا ۔۔۔ میں لٹریچر کی بات کر رہا ہوں ۔۔۔ بڑوں کے لیے لکھنے کی بات کر رہا ہوں ۔۔۔۔۔ مطلب ۔۔۔۔ کوئی لٹریری ناول ۔۔۔ افسانے ۔۔۔۔ مجھے معلوم ہے کہ آپ لکھیں گے تو بہت اچھا لکھیں گے ۔۔۔ بات یہ ہے کہ ۔۔۔۔۔ آپ کی تحریر سادہ ہے ۔۔۔ پڑھنے میں مزہ آتا ہے ۔۔۔ زندگی کو بھی بہت قریب سے دیکھا ہے ۔۔۔ رنگ رنگ کے لوگوں سے ملے ہیں ۔۔۔۔ آپ میں ایک بہت بڑے افسانہ نویس اور ناول نگار بننے کی پوری صلاحیت رکھتے ہیں ۔۔مجھے یقین ہے کہ اگر آپ لٹریری ورک کریں تو تہلکہ مچا سکتے ہیں ۔۔۔۔ بہت تھوڑی سی قابلیت والے بھی اس طرف آکر بڑے نام بن گئے ہیں ۔۔۔۔
آس : جی بہت شکریہ ۔۔۔ آپ ایسا سوچتے ہیں ۔۔۔۔۔
و ہ: بات یہ ہے کہ آپ خود کو ضایع کر رہے ہیں ۔۔
آس : وہ کیسے بھلا ۔۔۔۔؟
وہ : دیکھیں نا ۔۔۔۔ بچوں کے لیے لکھنے والوں کا کوئی مستقبل تو ہے نہیں ۔۔۔ وہ عزت بھی نہیں ملتی جو لٹریچر میں لوگوں کو ملتی ہے ۔۔۔۔ اور مر کھپ جائیں تو کسی کو یاد بھی نہیں ہوتا کہ کوئی لکھنے والاتھا ۔۔۔ آپ برا مت مانیے گا ۔۔۔۔ میں آپ کو نہیں کہہ رہا ۔۔۔ یہ جو کچھ بھی آ پ لکھتے ہیں نا ۔۔۔۔ یہ سب ضایع ہوجائے گا ۔۔۔۔ کسی کو یاد بھی نہیں رہے گا ۔۔۔۔۔
آس : آپ مجھے بھی کہہ لیں ،میں تب بھی برا نہیں مانوں گا ۔۔
وہ : شکریہ ۔۔۔ آپ میرا مطلب سمجھ گئے نا ۔۔۔۔۔ بڑوں کی طرف آئیں ۔۔۔ وہاں عزت ہے ۔۔۔ شہرت بھی ہے ۔۔۔۔
آس : بات یہ ہے فلاں صاحب ۔۔۔۔ میں جان بوجھ کر لٹریچر کی طرف نہیں جاتا ۔۔
وہ : ( چونک کر ) کیوں ۔۔۔۔؟
آس : کیوں کہ وہاں کسی کی کوئی عزت نہیں ۔۔۔
وہ : کیا مطلب ۔۔۔؟؟؟
آس : وہاں لابیاں ہیں ۔۔۔۔ ہر ادیب کا ایک گروپ ہے ۔۔۔۔ جس کی جیب میں پیسے ہوتے ہیں ۔۔۔ گروپ اس کا ہوتا ہے ۔۔۔ کوئی کسی اچھے سرکاری عہدے پہ ہے تو گروپ اس کا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔ کوئی پروفیسر ہے ،کسی تنظیم کو چلا رہا ہے ۔کوئی مشاعرے کرواتا ہے ۔۔۔۔ کوئی سستے میں کچھ کتابیں چھاپ دیتا ہے ۔۔۔۔ یا کوئی اشتہار دلواسکتا ہے کتاب یا رسالے کے لیے ، کوئی ادبی رسالہ نکال رہا ہے ۔۔۔ تو  گروپ اس کا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔گروپ کے لوگ ایک دوسرے کی عزت کرتے ہیں ۔۔۔۔اور اس کے علاوہ کسی کو مانتے تک نہیں ۔۔۔۔۔ یعنی ایک گروپ کا بڑا ادیب ،شاعر دوسرے گروپ میں دو کوڑی کا ہوتا ہے ۔۔۔
وہ : ( شرمندگی سے ) ہاں ۔۔۔ایسا چلن تو ہے ۔۔۔
آس : یہ بڑے لٹریری لوگ اپنے گروپ کی خوش نودی کے لیے لکھتے ہیں ،ایک دوسرے کی واہ واہ کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان بے چاروں کو پڑھنے والے دستیاب ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کتاب چھاپ لیں تو کوئی خریدار نہیں ۔ مفت بانٹنا پڑتی ہے ۔۔۔۔۔۔ پانچ سو کی تعداد میں ان کا رسالہ چھپتا ہے جو محض ادیب یا شاعروں تک اکثر مفت پہنچتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ( ایک آدھ کو چھوڑ کر )اور وہ اپنی تحریر دیکھتے ہیں اس میں ۔۔۔۔ا س کے سوا کچھ نہیں دیکھتے ۔۔۔۔۔۔۔ یعنی ان کو پڑھنے والے ان کے اپنے عہد کے بڑے لوگ بھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ اور ریڈر تو خیر نصیب ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔
وہ : ( خاموشی )
آس : میں بچوں کے لیے لکھتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ میری کہانی بچوں کے رسالے میں چھپتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ اخبارات کے ایڈیشن میں چھپتی ہیں ۔یا کتابوں کی صورت آتی ہیں ۔۔۔۔۔ بچوں کا کوئی رسالہ مفت تقسیم نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔۔اسٹال پر فروخت ہوتا ہے ۔۔۔ اس کے لکھنے والے تک شاکی رہتے ہیں کہ مدیر ہمیں رسالہ نہیں بھیجتے ۔ یعنی کھرا سودا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ جن کے لیے لکھا جاتا ہے ۔۔۔ وہ خرید کر پڑھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ اور ہمیشہ ہمارا نام یاد رکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔خواہ پڑھنے والے آگے چل کر شاعر بن جائیں یا ادیب ۔۔۔۔۔۔وہ ہمیں یاد رکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ کو یاد ہوں نا میں ۔۔۔۔۔۔ بچپن سے ہی ۔۔۔؟؟
وہ : ( چند لمحوں کی خاموشی کے بعد) جی ۔جی ۔۔۔
آس : اگر میں بڑوں کے لیے لکھوں گا تو مجھے اپنا قد بڑا کرنے اور رکھنے کے لیے اپنا ایک گروپ بنانا پڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔ کوئی ادبی رسالہ نکالنا ہوگا ۔ کوئی مشاعرہ وغیرہ کرنا ہوگا ۔۔۔کبھی کبھی دعوت بھی کرنا ہوگی ۔۔۔۔۔ ادبی نشست رکھنا ہوں گی ۔۔چائے لوازمات کا انتظام کرنا ہوگا ۔۔۔۔۔زبردستی انہیں کچھ سنانا ہوگا ۔۔۔۔ تب وہ مجھے بڑا اور باعزت مانیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔ کتاب اپنے پیسوں سے ،جمع پونجی سے چھاپنی ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔ انہیں ’’ فلاں کے زوق مطالعہ کی نذر‘ لکھ کر مفت دینی ہوگی ۔۔۔۔۔ اور وہ اسے پڑھے بغیر اپنے شیلف میں رکھ لے گا ،اور آنے جانے والوں کو دکھائے گا ۔۔۔ کہ دیکھو اب یہ بھی لکھتے ہیں وغیرہ وغیرہ ۔۔۔۔۔۔۔
ایسا ہی ہوتا ہے نا ۔۔۔؟؟؟
وہ : ( خاموشی )
آس :  آپ کو معلوم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں بچپن سے لکھ رہا ہوں ۔۔۔ اور اس وقت کے لکھنے والے آج بھی میرے دوست ہیں ،میری عزت کرتے ہیں ،میں ان کی عزت کرتا ہوں ۔۔۔۔ نہ انہیں کتاب بھیجنے کی ضرورت ہے اور نہ وہ سب کچھ کرنے کی ضرورت ہے جو لٹریچر والوں کو ’’ یہ عزت اور شہرت ‘‘ حاص ل کرنے کے لیے کرنا پڑتی ہے ۔۔۔
وہ : شش ۔۔ شاید آپ کو میری بات بری لگی ہے ۔۔۔؟
آس : نہیں ۔۔۔ بری نہیں لگی ۔ بتا رہا ہوں ۔۔۔۔۔ کہ میں جن لوگوں کے لیے لکھتا ہوں ،وہ معصوم ہوتے ہیں ۔۔۔ انہیں زیادہ کچھ معلوم بھی نہیں ہوتا ۔۔۔۔ لیکن میرا لکھا  ہوا انہیں سمجھ میں آتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔یہ بڑے لوگ جن کے لیے لکھتے ہیں ،۔۔۔۔۔ وہ ان ہی کی سمجھ میں نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عوام کے لیے تو خیر وہ لکھتے ہی نہیں کہ عوام کے لیے لکھنا سطحی کام ہے ۔۔۔۔ وہ تو خواص کے لیے لکھتے ہیں ،اور خواص وہ ہی ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔ان کے گروپ کے لوگ ۔۔۔۔۔۔ دوسرے گروپ کے لوگ تو مرتے مرجاتے ہیں ،نہ انہیں عزت دیتے ہیں نہ شہرت ۔۔۔
وہ : آپ کو واقعی برا لگا ہے ۔۔۔
آس : نہیں ۔۔۔برا نہیں لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ نے اپنی بات کی ۔۔۔ میں اب اپنی بات کر رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔ سادہ سی بات ہے ۔۔۔۔۔  ہم جس کے لیے لکھتے ہیں ،اس کی سمجھ میں آنا چاہیئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر اس کی سمجھ میں نہیں آئے گا تو اسے چھاپ کر پمفلٹ کی طرح بانٹنا پڑتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پمفلٹ لٹریچر نہیں ہوتا ۔۔۔۔ لٹریچر وہ ہوتا ہے ۔جو لوگوں کو یاد رہے ۔۔۔۔۔۔ان کی زندگی پر اثر انداز ہو ۔۔۔۔۔۔ آپ کو یاد ہے میرا لکھا ہوا ۔۔۔۔۔ اور آپ آگے چل کر لکھنے والے بنے ،سوچنے والے بنے ۔۔۔۔۔۔اس کا مطلب میں کام یاب رہا ۔۔۔۔ مجھے کیوں کسی درجن بھر لوگوں کے گروپ تک محدود کرنا چاہتے ہیں بھائی۔ ۔۔۔۔۔ اگر مجھے کوئی میری عمر سے بڑا آدمی ملے اور میرا نام سن کر کہے کہ اس نے مجھے بچپن میں پڑھا ہے تو اس سے زیادہ عزت کیا ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اگر کسی کو پوری زندگی میرا نام یا کہانی یاد ہے تو اس سے زیا دہ شہرت کیا ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اور سب سے بڑی بات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے اپنے لکھے کہ نہ وضاحت کرنی پرتی ہے ۔۔۔۔ نہ اپنی کہانیوں کی پرتیں کھلوانے کے لیے دوستوں کی منتیں کر کے اس پہ مضمون لکھوانا پڑتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ اور ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میرا لکھا غائب نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔ جب تک آپ زندہ رہو گے ۔۔۔ مجھے یاد رکھو گے ۔۔۔۔۔ یہی سب سے مضبوط بات ہے میرے بچوں کے لٹریچر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں بچپن سے دماغ میں جا کر بیٹھتا ہوں ۔۔۔اور بڑھاپے تک دماغ یا دل میں رہوں گا ۔۔۔۔ میرا کام کسی نام نہاد معرکہ آرا ناول یا افسانے سے کم نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور نہ ہی مجھے کسی تنقیدی مضمون کی ضرورت ہے ۔۔۔
وہ : آپ کو واقعی برا لگا ۔۔۔
آس : مجھے یہ برا لگا بھائی ۔۔۔۔ کہ آپ اپنی قوم کے بچوں کے لیے کیے جانے والے کام کو چھوٹا کام سمجھتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔اور جن لوگوں کا شعور پختہ ہوچکا ہے ،اسے تبدیل نہیں کیا جاسکتا ،ان کا دماغ تبدیل کرنے کی ناکام کوشش کو بڑا کام سمجھتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ ہمیشہ ناکام رہو گے اور میں ہمیشہ کام یاب رہوں گا ۔۔۔۔۔۔۔
وہ : اچھا ۔۔۔۔ ملتے ہیں ۔۔۔۔ اپنی کتابیں پیش کروں گا ۔۔۔ آپ کے نئے ناول آگئے ہیں ۔۔۔۔۔ ہم سینیر ادیبوں کو اعزازی ملنا تو ہمارا حق ہے نا ۔۔۔۔ ؟؟
آس : بچوں کا ادب اعزازی نہیں بٹتا ۔۔۔۔۔ خریدنا پڑتا ہے بھائی ۔۔۔۔۔۔۔ایکسپو آجائیں ۔بچوں کو ساتھ لائیں ۔۔۔۔۔انہیں خرید کر دیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ بھی بڑے ہوکر دانش ور یا آپ جیسے بڑے افسانہ نویس بنیں گے ۔۔۔۔۔۔ انہیں کتاب خرید کر پڑھنے کا چسکا لگائیں ۔۔۔ یہی ادب کی خدمت ہے ۔۔۔
وہ : اچھاٹھیک ہے ۔۔۔ میں سمجھ گیا ۔۔۔ ایکسپو میں ملاقات ہوتی ہے ۔۔۔۔
آس : جی ضرور ۔۔۔۔اللہ حافظ ۔۔۔۔۔


ابنِ آس محمد (کراچی)  مصنف، ڈرامہ نگار، صحافی اور کہانی نویس ہیں۔بچوں کے مختلف رسائل،      اخبارات و جرائد میں چالیس سے زائد  قسط وارناول اور کتابیں تحریر  کر چکے ہیں ان کی تخلیق  ‘شہہ زور’  کوبہت شہرت حاصل ہوئی۔ اب تک شایع   شدہ کتابوں اور ناولوں کی تعدا د  انیس  ہے۔بچوں کے لیے لکھی جانے والی انگریزی کی مقبول ترین کتاب ہیری پوٹر کا ترجمہ  بھی کیا ہے۔ اس کے علاوہ  ابنِ آس محمد نے نجی ٹی وی کے لیے  ڈرامہ سیریلز اور سیریز بھی لکھے ہیں۔ ان کی تحریر کردہ کہانیوں کے 14 مجموعوں کو نیشنل
بک فاؤنڈیشن سے پہلے اور دوسرے انعام مل چکے ہیں۔

Leave your comment !

Close