نعت خواں : سخاوت گیلانی، شاعر: عطاء راٹھور عطؔار پیشکش: ظہیر احمد مغل

عطاء راٹھور عطاء


باغِ  جنت     سے  خبر  بادِ   صبا  لائی  ہے
ہر  کلی  میں  تری خوشبو،  تری  رعنائی ہے

اُس جگہ پر  تو خزاں  میں بھی بہار آئی ہے
جس  جگہ پر  بھی   ترا  نقشِ  کفِ پائی ہے

 برگ ِ گل  میں  لب ِ اطہر  کی  نزاکت پنہاں
سینہِ   گل   میں   تری   صورتِ   زیبائی  ہے

کیوں  نہ  اشعار  تری نعت کے مجھ پر اتریں
تیرے ہی   در   سے قلم  نے   یہ  ضیا  پائی  ہے

اک  سہارا  ہے   شفاعت   کا      بروزِ    محشر
ورنہ   دامن   میں   مرے  ذلت  و  رسوائی ہے

دلِ بیمار  میں جو  نعت  کی چاہت بھر دی
یہ  کرم  ان  کا  ہے    اندازِ  مسیحائی ہے

صرف  عطؔار  ہی  کوثر   پہ  نہیں  دیدہ  براہ
عالمِ   کُل  ہی   تری   دید  کا    شیدائی  ہے

تیرا    شاعر     ترا     عطؔار   فدا  ہو  تجھ  پر
دیدہ ءِ دل  میں  ترے    نام    سے    بینائی  ہے