غزل

Jan 23, 2021

//امتیازفہیم

کوئی اک ھو تو بتائیں یہ کہانی کیا ھے

اس ستم رسیدہ صحرا میں پریشانی کیا ھے

ہجرتوں سے اٹی ہجر و فراق کے ستم سہتی

اور کیا کہیں ھم ایسوں کی زندگانی کیا ھے

مشقتوں سے کھلاتے ھیں ریت میں گلستاں

ھم کو معلوم ھے کہ قیمتِ شادمانی کیا ھے

ریزہ ریزہ کئے گئے جزبے ھماری محنتوں کے

جہانِ دو رنگ میں مزدور تئیں فروانی کیا ھے

دکھ سہہ کہ جیت کے لئے مسکراتے ھیں فہیم

ھم جانتے ھیں نظامِ کہنہ کی پشیمانی کیا ھے