write your article here

فاروق اسیر

غزل

آنکھ دوارے خواب ستارے اچھے لگتے ہیں

سوچ میں ڈوبے نین تمہارے اچھے لگتے ہیں

پیار میں اک دوجے کی بپتا من میں کُھبتی ہے

باہم ہوں جو سوچ کے دھارے اچھے لگتے ہیں

من مندر میں میرے بھی اک دیوی رہتی ہے

سوچ کے اُس کو منظر سارے اچھے لگتے ہیں

تیرے سنگ جن رستوں پر ہم گھوما کرتے تھے

ابھی تلک وہ رستے سارے اچھے لگتے ہیں

تیری یادیں وابستہ فاروق اُ ن راہوں سے

جب بھی جاؤں جھیل کنارے اچھے لگتے ہیں