Urdu site‎ > ‎

آزادکشمیر میں جنگلات کی کٹائی روکی جائے: ماہرین ماحولیات

مظفر آباد : ماہرین ماحولیات نے خبردار کیا ہے کہ آزادکشمیر میں فوری طور پر جنگلات کی کٹائی روکی نہ گئی اور جنگلی حیات کے تحفظ کیلئے اقدامات نہ اٹھائے گئے تو ماحولیاتی بگاڑ پیدا ہونے کے ساتھ کامن لیپرڈ سمیت کئی اقسام کی جنگلی حیات معدوم ہو کر رہ جائے گی دوہزار پانچ کے بعد آزادکشمیر کی جنگلوں میں کامن لیپرڈ قسم کے چیتوں کی تعداد بڑھی ہے جبکہ خوراک میں کمی واقع ہو رہی ہے جس کی وجہ سے انسانی آبادیوں کا رخ کرنے والے نایاب چیتے مارے جا رہے ہیں ایک سال کے دوران آزادکشمیرمیں ایک درجن چیتے مارے گئے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار آزادجموں وکشمیر یونیورسٹی کے شعبہ ذوالوجی ،پاکستان وائلڈ لائف فاؤنڈیشن ،بریتھ فاؤنڈیشن مظفرآبادکے زیر اہتمام آزادجموں وکشمیر یونیورسٹی چہیلہ بانڈی کیمپس میں ماحولیات اور جنگلی حیات کے حوالے سے منعقدہ مباحثے سے خطاب کرتے ہوئے ماہرین نے کیا مباحثے میں عالمی شہرت یافتہ ماہر ماحولیات پروفیسر زاہد بیگ مرزا نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ آزادکشمیر بھر خصوصاً وادی نیلم میں قیمتی جنگلات پائے جاتے ہیں جن میں انواع قسم کی جنگلی حیات بھی موجود ہے مگر جنگلات کے بے دریغ کٹائی کے باعث ماحولیاتی بگاڑ پیدا ہو نے کا خدشہ ہے اور اگر جنگلی حیات معدوم ہو گئی تو شدید بگاڑ پیدا ہو سکتا ہے کیوں کہ ایک جنگلی حیات کے خاتمے کے باعث حیاتیاتی نظام میں بگاڑ پیدا کر سکتا ہے انہوں نے کہا کہ جنگلات کی کٹائی کے باعث اب ہر سال سیلاب آنا شروع ہو گئے ہیں اور زیر زمین پانی کے ذخائر میں بھی کمی واقع ہو رہی ہے ۔مباحثے سے ماہرین ماحولیات پروفیسر عزیز خان،پروفیسرمحمدصدیق ،کنزرویٹر محکمہ جنگلات عبدالرؤف قریشی ،ڈپٹی ڈائریکٹر محکمہ وائلڈ لائف نعیم افتخار ڈاراور قمر الزمان سمیت دیگر ماہرین نے بھی خطاب کیا ماہرین کہا کہ آزادکشمیر میں ہنگامی بنیادوں پر ماحولیات اور جنگلی حیات کے تحفظ کیلئے جامع منصوبہ بندی کے تحت کام کرنے کی ضرورت ہے اور جنگلات کی کٹائی کی روک تھام سرکاری اور غیر سرکاری اداروں کو باہم ملکر کام کرنا ہو گا۔مباحثے میں آزادجموں وکشمیر یونیورسٹی کے پورفیسرز طلبہ و طالبات نے بڑی تعداد میں شرکت کی مباحثے کے بعد معروف ماہر ماحولیات پروفیسر زاہد بیگ مرزآزادجموں وکشمیر یونیورسٹی کے طلبہ وطالبات کے ہمراہ سیاحتی مقام پٹہکہ کا دورہ کیا جہاں انہوں نے طلبہ و طالبات کو جنگلی حیات اور ماحولیات کے حوالے سے عملی تجربات بھی کرائے۔
Comments