وادی نیلم :خواتین کنٹرول لائین پر بھارتی جارحیت کے خلاف سڑکوں پر نکل آئیں

posted Aug 21, 2013, 2:37 PM by PFP Admin   [ updated Mar 16, 2014, 4:41 PM ]
امن کے لئے بینرز اور پلے کارڈ ز اٹھائے خواتین نے اس موقع پر عالمی دنیا سے بھی مطالبہ کیا کہ کنٹرول لائن پر گذشتہ کشیدگی کی وجہ سے چودہ سال تک وادی نیلم میں سکول نہیں کھولےجا سکے جس کی وجہ سے ایک پوری نسل ان پڑھ جوان ہو گئی ہے اگر باقی دنیا کے بچوں کو تعلیم کا حق تسلیم کیا گیا ہے تو کشمیریوں کے بچوں کو بھی یہ حق دیا جائے اور ہر اس اقدام سے احتراز کیا جائے جس سے 
کنٹرول لائن پر کشیدگی کو ہوا ملتی ہو









اس موقع پرخواتین کو یقین دلاتے ہوئے مقامی
 فوجی کمانڈر کا کہنا تھا کہ ان کا مطالبہ حکومت پاکستان تک پہنچا دیا جائے گا تاہم اگر بھارت نے کوئی مہم جوئی کی کوشش کی تو پاکستان کی فوج کشمیریوں کی محافظ بن کر ان کو بھارتی بچائے گی ۔
کنٹرول لائین پر واقع وادی نیلم کے ہیڈ کورٹر آٹمقام میں خواتین کنٹرول لائین پر بھارتی جارحیت کے خلاف سڑکوں پر نکل آئیں ، مقامی فوجی کمانڈر کے دفتر تک مارچ کر کے یاداشت پیش کی گی
خواتین کا مطالبہ تھا کہ بھارت کیجانب کنٹرول لائن پر بلا اشعال فائرنگ کا سلسلہ یون ہی جاری رہا تو وادی نیلم میں نو ے کی دھائی کی طرح زندگی پھر مفلوج ہو کر رہ جائے گی حکومت پاکستان اقوام متحدہ کی سطح پر بھارت کو جارحیت سے روکنے کے لئے اثر رسوخ استعال 
کرے ۔



Comments