مسئلہ کشمیر پر بات چیت کا اعلان خوش آئند ہے ، اعجاز الرحمٰن

posted Feb 2, 2013, 9:29 PM by PFP Admin   [ updated Feb 2, 2013, 9:46 PM ]

امن اور مذاکراتی عمل میں دونوں ممالک کو انتہائی محتاط اور مناسب انداز میں آگے بڑھنا ہو گا۔ وزیر خارجہ نے کہا جامع مذاکراتی عمل کی بحالی کیلئے بھارت نے کوئی شرط عائد نہیں کی لیکن اس کیلئے ترجیحات طے کرنا ہوں گی کہ کس طرح بات چیت کو م¶ثر انداز میں آگے بڑھایا جا سکتا ہے

  ایک انٹرویو میں بھارتی وزیر خارجہ سلمان خورشید نے کہا ہم پاکستان کیساتھ مسئلہ کشمیر پر بات چیت پر سنجیدگی کیساتھ آگے بڑھنا چاہتے ہیں لیکن ہماری تشویش اور احساسات کو مدنظر رکھنا آگے بڑھنے کی پہلی شرط ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ بھارت مسئلہ کشمیر سمیت تمام دوطرفہ معاملات پر گفت و شنید کرنا چاہتا ہے اور اس سلسلے میں کوئی ہچکچاہٹ نہیں ۔ اہم بات یہ ہے کوئی بھی رابطہ طے شدہ طریقہ کار کے مطابق ہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کنٹرول لائن پر حالیہ تناﺅ اور کشیدگی کے بعد جیسے دونوں ملکوں کے ڈی جی ملٹری آپریشنز اور دونوں اطراف فلیگ کمانڈرز کے رابطے ہوئے ہیں ٹھیک اسی طرح درست ماحول میں دیگر رابطے بھی ہو سکتے ہیں۔ 
اسٹوک آن ٹرینٹ ( برطانیہ ) )  امن ، انسانی حقوق اور پائیدارترقی کے لئے کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیم پریس فار پیس نے بھارت کی جانب سے مسئلہ کشمیر پر سنجیدہ بات چیت کے اعلان کو خوش آئند قرار دیا ہے۔  تنظیم کے  برطانیہ میں  نمائندے  اعجاز الرحمٰن نے  اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے  کہاکہ  بھارتی حکومت کا حالیہ اعلان کنٹرول لائن کے آر پار موجودہ تشویشناک صورت حال کو بہتری کی جانب لے جائے گا۔ 
بھارت نے پاکستان کیساتھ مسئلہ کشمیر پر سنجیدگی سے مذاکرات کرنے کا
 اعلان کرتے ہوئے کہا ہے پڑوسی ملک کیساتھ بات چیت میں کوئی ہچکچاہٹ نہیں تاہم مذاکراتی عمل کو آگے بڑھانے کیلئے درست ماحول 
ناگزیر ہے اور اس کیلئے مناسب وقت کا انتظار ہے۔
۔