کستوری ہرن کا شکار

پاکستانی کشمیر کے شمالی بالائی علاقوں کے جنگلات میں محکمہ وائلڈ لائف کی سرپرستی میں کستوری ہرن کا شکار
وادی نیلم کے بالائی علاقوں کے گھنے جنگلات میٰں برف باری کے باعث جنگلی جانوروں نے خوراک کے لئے نچلے علاقوں کا رخ کیا تھا جن میں زیادہ تعداد کستوری ہرنوں کی ہے۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ محکمہ وائلڈ لائف کے اہلکار وادی نیلم میں پائے جانے والے نایاب کستوری جنگلی ہرن کے تحفظ کے بجائے شکاریوں سے رقم لیکر اس کے شکار میں ان کی معاونت کررہے ہیں۔
شکاری کستوری ہرن کے ناف سیمت نکالے جانے والے دیگر اعضا کولاکھوں روپے میں فروخت کرتے ہیں جبکہ بین الاقوامی مارکیٹ میں اس کی قیمت کروڑوں میں ہوتی ہے۔ لوگوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ انتظامیہ جنگلی ہرن کا غیر قانونی شکار کرنے والوں کے خلاف کارروائی کرے ۔ وادی نیلم اور وادی لیپہ کے جنگلات میں پائے جانے والے کستوری ہرنوں کے شکار پر بین الاقوامی پابندی ہے۔
Comments