Category: تصویر کہانی

مری بروری

کہانی کار: عامر عباسی یہ عمارت مشہورِزمانہ کمپنی مری بروری  کی  فیکٹری کی ہے۔ہم میں سے شاید ہی کوئی ہو جس نے اسلام آباد سے مری جاتے ہوئے ڈیڑھ صدی قبل گوتھک طرزِ تعمیر پہ بنی اس عمارت کے کھنڈرات نہ دیکھے ہوں۔  اگر آپ اسلام آباد سے مری براستہ مری کشمیر روڈ جائیں ۔ تو تقریباً چالیس کلومیٹر کے بعدگھوڑا گلی اور بانسرہ گلی کے درمیان میں بروری نام کا ایک گاؤں آتا ہے۔  اور اسی مقام پر یہ عمارت آپ کو نظر آۓ گی۔ با ذوق لوگوں کو تو اس کی تاریخ خوب معلوم ہے۔ لیکن جن لوگوں نے اس قسم کے شوق نہیں پال رکھے ان کے لیےعرض ہے۔  کہ یہ عمارت پاکستان کی مشہور کمپنی مری بروری کی فیکٹری ہوتی تھی۔ اور یہاں پر مشروبِ مغرب کشید کیا جاتاتھا۔ تقریباً ڈیڑھ صدی قبل اس کو انگریز سرکار نے تعمیر کیا تھا اور اس کا مقصد گھوڑا گلی میں موجود اپنے انگریز فوجیوں کاخون گرم رکھنا تھا۔  قیامِ پاکستان کے وقت اس عمارت کو جلا  دیا گیا تھا۔ اس وقت سے اس عمارت کے بچے کھچے کھنڈرات وقت کی بےرحم موجوں کے آسرے پر ہیں۔ اور آج بھی برطانوی دور کی یاد دلاتے ہیں۔ راقم کا تعلق بھی مری سے ہے ۔ تو اپنی یاداشت کاسہارا لیتے ہوئے میں یہ عرض کر سکتا ہوں کہ یہ کھنڈرات گزرتے وقت کے ساتھ کم سے کم ہوتے جا رہے ہیں ۔ اب ہم یہی خواہش کر سکتے ہیں کہ کاش آثارِ قدیمہ والوں کی نظر اس پر پڑ جائے اور وہ ان کھنڈرات کو محفوظ کر لیں۔جبکہ یہ…

قدیم کشمیری سماوار

کہانی کار : سید سبطین جعفری  تصویرمیں نظر آنے والی چا ئے یا قہوہ کی چینک  ہے ۔ جو 1930 میں راولپنڈی میں خرید گئی ۔ مگر  ابھی اپنی اصلی حالت میں  موجود ہے ۔ یہ چینک تانبے کی بنی ہے۔ اور  پیر سید محمد صدیق شاہ ندوی اور کشمیری مصنف سید بشیرحسین جعفری کے آبائی گھر سوہاوہ شریف باغ ، آزاد کشمیر میں موجود ہے۔ یہ ہمارے دادا پیر سید محمد ایوب شاہ صاحب نے خریدی اور استعمال کی ۔ اس کے ڈھکن پر پیرایوب شاہ کانام بھی کندہ ہے ۔…

راولاکوٹ گردوارہ سکھ عہد کی یادگار

کہانی کار : حمید کامران آزاد کشمیر کے صحت افزا مقام راولاکوٹ کا گُردوار ہ ایک تاریخی عمارت ہے -چھپے نی دھار یا ساپے نی دھار گاؤں کیانتہائی بلندی پہ تعمیر کردہ یہ  عمارت ہزاروں آندھیوں طوفانوں اور زلزلوں کا مقابلہ کرتی صدیوں سے استقامت سے کھڑیاپنے مضبوطی کو منوانے میں حق بجانب ہے -اس کی تعمیر میں پتھر اور چونے کا مٹیریل استعمال ہوا ہے  اس کے پتھرخوبصورتی سے تراش کر بنائے گئے ہیں جو پرانے زمانے کے لوگوں کی ہنر مندی اور اعلی ذوق کی ایک مثال ہے اس کاچھت پتھروں اور مٹی سے بنا ہوا ہے برسات میں اس پہ گھاس اور سرما میں اس پر برف بہت خوبصورت لگتی ہے -یہاں سے ہوکر پوری وادیِ پرل راولاکوٹ نظر آتی ہے -چھاپے نی دھار گاؤں کے شمال میں دھمنی مشرق کی سمت چہڑھدریک اور سامنے تراڑ کا علاہ ہے جبکہ راولاکوٹ کا شہر کا بہت خوبصورت نظارہ ہوتا ہے -یہ گردوارہ اس علاقے کی قدیمعبادت گاہ ہے لیکن محکمہ سیاحت کی بے حسی اور غفلت کا شکار ہے – متعلقہ اداروں کو اس تاریخی عبادت گاہ کی مرمتیاور حفاظت کے لئے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے –