Month: 2021 فروری

باغ وبہاراں شخصیت کے مالک پرنسپل شوکت حسین ، تحریر : پروفیسر خالد اکبر‎

تحریر : پروفیسر خالد اکبر اُس کی امیدیں قلیل اُس کے مقاصد جلیل                 نرم      دم   گفتگو ،گرم     دم جستجو  سرخ اور سپید چہرہ،کشادہ پیشانی،دراز قد،گرجدار آواز، چہرے پر  تمکنت ،اُجلا لباس اور ہجوم میں نمایاں دیکھائی دینےوالے باغ وبہاراں شخصیت کے مالک پرنسپل شوکت  حسین ا لمعروف ڈی پی شوکت  صاحب کے بارے میں ایک  نظر یا  ایک ملاقات میں رائے قائم کرنا مشکل ہوتی ہے۔ چند روز کی رفاقت کے بعد اُن کے شخصیت کی پرتیں کھلتی ہیں توآپ انہیں انتہائی  خوش باش،ممان نواز، ہمدرد،ہم احساس،محنتی اور سنجیدہ شخصیت پائیں گے۔  آپ 1960 میں تراڑکھل کے نواحی گاؤں نڑیو لہ کے  ایک متمول گھرانے  میں متولد  ہوئے۔ تاہم بعد ازاں  تراڑکھل کے  صدیوں سےمشہور  تاریخی اور  خوب صورت چار چناروں سے اس قد ر مسحور  اور متاثرہوئے کے انکے   عین رُو برو  اپنے آشیانہ ایستاد کر دیا۔  ا نٹر میڈیٹ تک  تعلیم  تراڑکھل سے حاصل کی۔ گریجویشن اور فزیکل ایجوکیشن کی ماسٹر ڈگریاں پنجاب یونیورسٹی سے حاصل کی۔ زمانہ طالب علمی میں  فٹ بال اور والی بال کے عمدہ  کھلاڑی رہے  اور طلبہ تنظیموں میں بھی فعال کردا ر ادا کیا۔ بطور  ڈائریکٹر فزیکل ایجو کیشن  شعبہ کالجز کو جوائن کیا  اور یوں اپنے مادرعلمی  انٹر کالج تراڑکھل سے  ۱پنے  کیریز کا آغاز کیا۔ سروس کے دوران خوش بختی کا بھر پور ساتھ رہا۔پورے 36  سال کے عرصہ میں صرف ایک دفعہ تبادلہ ہوا۔ وہ بھی  گرلزانٹر کالج ترٓاڑکھل کے پرنسپل کے طور پر۔۔ یوں  اپنا  نشیمن سے   دونوں جائے کار   صرف  Stone’s throw کے فاصلہ پر واقع ہوئی…بس ہاتھ کو زرہ  سا  twist   دینے کی ضرورت رہی۔ گرلز کالج کا پرنسپل بننے کے بعد اُنھوں نے اس ادارہ کا نقشہ ہی  بدل ڈالا۔ تراڑکھل اور نواح…

سمیع اللہ عزیز منہاس (آرکیٹکٹ)۔ محقق، مصنّف ، وادئ نیلم ۔ آزاد کشمیر

سمیع اللہ عزیز منہاس پیشے کے اعتبار سے آرکیٹکٹ ہیں – انھوں نے اپنے پیشہ ورانہ علم کو وادی نیلم کی تاریخ و ثقافت کے مخفی گوشوں کو مناظر عام پر لا کر ایک تاریخی کارنامہ سرانجام دیاہے -وہ ایک محقق اور لکھاری ہیں – اور صداۓ نیلم اور دیگر پلیٹ فارم کے ذریعے تحقیقی اور علمی سرگرمیوں کی سرپرستی اور قیادت کر رہے ہیں -وہ تاریخ اور ثقافت کےموضوعات  پر اخبارات اور جرائد میں لکھتے ہیں – ان کی ایک کتاب  نیلم سےناگ تک شائع ہو چکی ہے ۔

پروفیسرالیف الدین ترابی، اسکالر ، سیاسی و مذہبی رہنما

پروفیسرالیف الدین ترابی27 اگست 1941ء کو مقبوضہ کشمیر کے ضلع پونچھ کے ایک دیندار گھرانےمیں پیدا ہوئے ۔  انھوں نےگریجویشن 1963ء میں کشمیر یونیورسٹی سے کیا۔ 1965ء میں انھوں نے پاکستانی زیرانتظام کشمیر کی طرف ہجرت کی،پلندری کو اپنا مسکن بنایا اور تدریس کے شعبے سے وابستہ ہوگے  وہ کئی اہم حکومتی عہدوں پر بھی فائز رہے۔ انھیں حجاز مقدس کے سفر کا شرف حاصل ہوا۔ ادارہ معارف اسلامی وہاں جامعہ ام القریٰ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے بعد واپس پاکستان آکر لاہور ادارہ معارفِ اسلامی سے وابستہ ہوئے   کشمیر میں آزادی کی تحریک نے جب نئی انگڑی لی تو اسے منظم اور مربوط بنیادوں پرجاری رکھنے کے لیے اپنا بھرپور کردار ادا کیا۔  آپ نے کشمیر کے بارے میں متعدد کتابچے عربی زبان میں لکھےوہ عریی زبان کے مجلے کشمیر المسلمہ کے ایڈیٹر  بھی تھے وہ عرب دنیا کی صحافت میں کشمیر کاز کے لئے تسلسل کے ساتھ لکھتےرہے – پروفیسرالیف الدین ترابی کی تصانیف  تحریک آزادی کشمیر منزل بہ منزل  ایڈیٹر۔ کشمیر المسلمہ- عربی مجلہ 

ناصر بیگ چغتائی صحافی ، اینکرپرسن، مصنف

ناصر بیگ چغتائ سینئر صحافی ہیں۔ اُن کی صحافت سے وابستگی کو تیس سال سے زائد ہو گئے ہیں۔ وہ انیس سو اسی کےآغاز میں صحافت سے وابستہ ہوئے اور مختلف اخبارات میں اہم پوزیشنز پر فائز رہے۔ اردو نیوز جدہ کے بانی ممبر اورایڈیٹر بھی رہے۔ مستقبل پر نظر رکھتے ہوئے دو ہزار دو میں پرنٹ سے الیکٹرونک میڈیا سے ناطہ جوڑا، اور جیو نیوز دبئی کی لانچنگ میں اہم کردار ادا کیا۔ اے آر وائی ون ورلڈ کے ہیڈ بھی رہے۔ ناصر بیگ چغتائی کو یہ اعزاز بھی حاصل ہے کہ وہ پاکستانیوں کے اس پہلے وفد میں شامل تھے جو بحیثیت صحافی مقبوضہ کشمیر گئے اور وہاں کےحالات کا مشاہدہ کیا۔  ناصر بیگ چغتائی کشمیر کاز  کے لیے کام انہوں نے سری نگر کے مشہور لال چوک اور سری نگر یونیورسٹی میں پروگرام بھی ریکارڈ کر کے نشرکیے۔ وہ دو سو سے زائد ٹی وی شوز کی میزبانی بھی کر چکے ہیں۔ اب تک پر ’’این بی سی آن لائن‘‘ ان کا مقبول ٹی وی شو تھا۔ جس میں فلسطین، کشمیر، عراق، افغانستان اور دنیا بھر کے اہم موضوعات پر بصیرت افروز اظہار خیال کیا۔اب بھی مختلف ٹی وی چینلز پر بطور مبصر انہیں اظہارِ خیال کے لیے طلب کیا جاتا ہے۔ ناصر بیگ چغتائی کے ناول “سلگتے  چنار “کا مختصر احوال  نریندر مودی حکومت نے پانچ اگست دو ہزار انیس کو مقبوضہ جموں و کشمیر سے متعلق اپنے آئین کا آرٹیکل 370 ختم کردیا۔ برہان الدین وانی کے قتل کے بعد سے جاری ظلم کی سیاہ رات مزید طویل ہو گئی۔ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کو سوروز سے زائد گزر گئے، ابھی اس کے خاتمے کے کوئی آثار نہیں ہیں۔ لیکن کشمیر عوام کے جوش و خروش میں کوئی کمی نہیں آئی۔ نتیجتاً بھارتی حکومت کو کرفیو اٹھانے کی ہمت نہیں ہو رہی۔  اس صورتحال میں پاکستان کے مایہ ناز صحافی،معروف ٹی وی اینکر ناصر بیگ چغتائی ( جنہیں ان کے دوست اور فیض اٹھانے والے این بی سی کے نام سے پکارتے ہیں) کا جد و جہد آزادی کشمیر کے موضوع پر مبنی ناول ’’سلگتے چنار‘‘ شائع ہوا -ناول ’’سلگتے چنار‘‘ کا پہلا حصہ بھی ہفت روزہ’’اخبار جہاں ‘‘ میں قسط وار شائع ہوتا رہا۔  اور اس نے بے پناہ مقبولیت حاصل کی۔ قدرے فرصت نے ایک مرتبہ پھرناصر بیگ چغتائی کو علم و ادب کی جانب رجوع کرنے پر مائل کیا اور انہوں نے تحریر سے دوبارہ ناطہ جوڑنے کے عزم کااظہار کیا ہے۔ خبر سے طویل وابستگی اور کشمیر سے لگاؤ کے پس منظر میں ناصر بیگ چغتائی نے دو ہزار میں شائع ہونےوالے ناول ’’سلگتے چنار‘‘ کا دوسرا حصہ لکھنے کا فیصلہ کیا۔ جس میں کہانی حالیہ واقعات کے پس منظر میں آگے بڑھتیہے۔ ناول کے دونوں حصے ایک ساتھ فضلی بکس نے انتہائی خوبصورتی شائع کیے ہیں- –

سردارعارف شاہد شہید ، سیاسی رہنما ، مصنّف، آزاد کشمیر

عارف شاہد آل پارٹیز نیشنلسٹ الائنس کے سابق چیر مین اور نیشنل لبریشن کانفرنس کے صدر تھے۔ عارف شاہد ایک کشمیری قوم پرست رہنما کی حیثیت سے جانے جاتے تھے، وہ پاکستان اور بھارت دونوں ملکوں…

احسن عزیز انجنئیر، ادیب ، شاعر، میرپور

انجینئر احسن عزیز ایک بلند پایہ ادیب اور شاعر تھے ۔ انھوں نے انجنئیرنگ کی تعلیم میرپور میں حاصل کی – وہ طلبہ سیاست میں بھی متحرک تھے۔ انہوں نے نوجوانی میں ہی ایسی بلند پایہ کتابیں لکھی ہیں کہ انسان حیران رہ جاتا ہے ۔ احسن عزیز انجنئیر کی تصانیف  1۔تمہارا مجھ سے وعدہ تھا  2۔اجنبی کل اور آج 3۔اک فرض جسے ہم بھول گئے